دبئی مال میں تنوع متحدہ عرب امارات میں رواداری کی مثال ہے: سفیر یورپی یونین

از محمد عامر، نمائندہ خصوصی ابوظہبی، 25 نومبر، 2018 (وام)۔۔ متحدہ عرب امارات کے لئے یورپی یونین کے سفیر پیٹریزیو فاؤنڈی نے کہا ہے کہ مشرق وسطی اور شمالی افریقہ میں استحکام کو یقینی بنانے کے لئے متحدہ عرب امارات کا کردار قابل ذکر اور وقت کی اہم ضرورت ہے اور دبئی مال میں لوگوں اور ثقافتوں کا تنوع اس ملک میں رواداری کی بڑی مثال ہے.

"شیخ زاید اور یورپ: ایک سفر" نمائش کے موقع پر امارات نیوز ایجنسی (وام) کوخصوصی انٹرویو میں یورپی یونین کے سفیر نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کی استحکام کی خواہش بہت زیادہ اہم اور خطے میں وقت کی ضرورت ہے کیونکہ خطہ گزشتہ کئی سال سے دباو میں ہے.

فاؤنڈی کا کہنا تھا کہ یورپ متحدہ عرب امارات کے ساتھ خصوصی لگاو رکھتا ہے۔ متحدہ عرب امارات خطے کا واحد عرب ملک ہے جسے شینجن ویزا کی چھوٹ دی گئی ہے اور امارت کے لوگ بغیر کسی ویزا کے یورپ جاسکتے ہیں.

انہوں نے خطے میں امن اور استحکام کو فروغ دینے میں متحدہ عرب امارات کے رواداری اور ہم آہنگی ماڈل کی تعریف کی اور کہا کہ دبئی مال میں مختلف پس منظر کے لوگوں کی موجودگی ملک میں رواداری کی مثال ہے.

یورپی یونین کے سفیر نے کہا کہ دبئی مال میں دنیا بھر سے آئے ہوئے لوگ مختلف کپڑوں، عادات اور زبانوں کے ساتھ اکھٹے نظر آتے ہیں۔ آپ ان سب کو ایک دوسرے کے ساتھ اکھٹے اور ایک دوسرے کا احترام کرتے دیکھتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ یہ دنیا بھر کے لئے رواداری کا ایک اچھا ماڈل ہے.

"شیخ زاید اور یورپ: ایک سفر" نمائش خارجہ امور اور بین الاقوامی تعاون کی وزارت کی سرپرستیم میں یورپی یونین کے وفد کے زیرانتظام 25 نومبر سے 31 دسمبر 2018 تک متحدہ عرب امارات میں منعقد کی جا رہی ہے.

نمائش میں شیخ زاید کے یورپ کے دورے کی نایاب تصاویر، فوٹیج، انکی بعض یورپی ساختہ چیزوں اور متحدہ عرب امارات اور یورپ کے درمیان ثقافتی اور تاریخی تبادلے سے متعلق دیگر قدیم اشیاء کی نمائش کی جاتی ہے ۔ ان اشیاء میں سے بعض کو پہلے کبھی نہیں دکھایا گیا.

سفیر نے کہا کہ متحدہ عرب امارات اور یورپی یونین کے درمیان دوستی کے جشن کے موقع پر یہ نمائش ہمارے لئے انتہائی اہم ہے۔ انہوں نے کہا کہ شیخ زاید نے اس دوستی کے فروغ میں بہت اہم کردار ادا کیا اور اب وہ متحدہ عرب امارات کی موجودہ قیادت کے ساتھ اس دوستی کو جاری رکھے ہوئے ہیں.

یورپ میں اس نمائش کے انعقاد کا امکان ظاہر کرتے ہوئے فاونڈی نے کہا کہ یورپی یونین اس سلسلے میں متحدہ عرب امارات کے حکام کے ساتھ تعاون کرنے کے لئے تیار ہوگا.

انکا کہنا تھا کہ انھیں اس بات پر خوشی ہوگی کہ اگر یورپ میں لوگ ان چیزوں، آڈیوز، ویڈیوز اور تصاویر کو دیکھ سکیں کیونکہ اس یادگاری مجموعے کو دیکھنا ایک واقعی غیر معمولی تجربہ ہے.

ترجمہ: ریاض خان

http://wam.ae/en/details/1395302723014

WAM/MOHD AAMIR