ڈی آئی ایف سی  عدالت کا  طویل المیعاد ویزے کے اجراء کا خیرمقدم

دبئی، 4 دسمبر، 2018 ، وام ۔۔غیر مسلموں کے لئے ڈی آئی ایف سی عدالت کی وصیت رجسٹری نے حکومت کی طرف سے طویل المیعاد ویزوں کے اجراء کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ فیصلہ متحدہ عرب امارات کے رہائشیوں کی انکے خاندانوں کی ایک محفوظ اور قابل عمل وصیت کے ذریعے انکے مالی مستقبل کو یقینی بنانے میں مدد کریگا۔ ڈی آئی ایف سی کورٹس میں غیر مسلموں کے لئے ولز رجسٹری کو توقع ہے کہ اس فیصلے کے بعد ان غیر مسلموں کی ولز کی رجسٹریشن میں اضافہ ہوگا جن کا مستقبل متحدہ عرب امارات سے وابستہ ہے۔ ڈی آئی ایف سی کورٹس کے چیف جسٹس تن زکی بن عظمی نے کہا کہ یہ تازہ ترین اقدامات متحدہ عرب امارات کی جدت پسندانہ سوچ کی اس حکمت عملی میں ایک اور اہم قدم ہے جس کا مقصد دولت اور باصلاحیت لوگوں کو اسی ملک میں رکھنا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہم یہا ں رہنے والوں اور سرمایہ کاروں کیلئے اس فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں ۔ یہ فیصلہ اس سال کے اوائل میں ریٹائرمنٹ ویزا فراہم کرنے کے فیصلے کے نتیجے میں کیا گیا ہے۔ متحدہ عرب امارات کی وفاقی کابینہ نے اس ہفتے سرمایہ کاروں، کاروباری اداروں اور سائنس، ٹیکنالوجی، طب اور ثقافت کے شعبوں کے ماہرین اور طلباء کے لئے دس سال کے ویزے کی فراہمی کا فیصلہ کیا تھا۔ 2015 سے اب تک 4,500 سے زائد وصیتیں رجسٹر کرائی گئی ہیں جن میں سے زیادہ تر طویل عرصے سے رہائش پذیر ان لوگوں کی طرف سے جمع کرائی گئیں جنہوں نے نجی کاروباری اداروں میں قابل ذکر سرمایہ کاری کر رکھی ہے۔ شریعت کے قانون کے مطابق ، کسی تصدیق شدہ وصیت کے بغیر کسی بھی متحدہ عرب امارات کے رہائشی کی موت کے بعد اسکے اثاثے خاندان کے ارکان کے درمیان تقسیم کئے جائیں گے۔ ریاض خان http://wam.ae/en/details/1395302725054

WAM/Ahlam Al Mazrooi