الحصن کوسات دسمبر سے عوام کے لئے کھول دیا جائے گا

ابوظہبی،4دسمبر،2018(وام)۔۔ابوظہبی کے محکمہ ثقافت وسیاحت نے الحصن کو جمعہ سات دسمبر کو شام چار بجے سے عوام کے لئے کھولنے کا اعلان کیا ہے ۔الحصن دبئی کا حقیقی شہری علاقہ ہے جو آپس میں منسلک چار حصوں پر مشتمل ہے،جن میں تاریخی اہمیت کا حامل الحصن کا قلعہ،قومی مشاورتی کونسل ،کلچرل فاونڈیشن اور ہاوس آف آرٹیسانز کی عمارتیں شامل ہیں۔اس موقع پر ہونے والی باضابطہ افتتاحی تقریب میں امارات کی بھرپور تاریخ وثقافت کا مظاہرہ کیا جائے گا اوراس مناسبت سے ایک ہفتہ تک تقریبات اور پروگرامز کا انعقاد جاری رہے گا۔ابوظہبی کے محکمہ ثقافت وسیاحت کے چیئرمین محمد خلیفہ المبارک نے کہا کہ الحصن ابوظہبی کی ثقافت اور ورثہ کی علامت اور ملک کی ترقی کے مختلف ادوار کاشاہد ہے۔بحالی اور تزئین و آرائش کے ساتھ محفوظ کیے گئے اس ثقافتی ورثہ کو دوبارہ عوام کو متعارف کرانا ہمارے لئے باعث فخر ہے۔یہ امارات کے عظیم ویژن کا عکاس ہے جسے صدر عزت مآب شیخ خلیفہ بن زاید آل نھیان کی جانب سے مضبوط بنایا جارہا ہے۔الحصن ناصرف ابوظہبی کے ارتقا،اس کی واقعات سے بھرپور اور دلچسپ یاداشتوں کو سموئے ہوئے ہے بلکہ اس نے ہمارے ملک کے تخلیق سے بھرپور مستقبل کے ویژن کا بھی تعین کیا۔ اس حوالے سے ابوظہبی محکمہ ثقافت وسیاحت کے انڈر سیکرٹری سیف سعید غباش نے کہا کہ الحصن کے کھلنے سے ابوظہبی میں ثقافتی وسیاحتی مقام کا ایک منفرد اضافہ ہوگا۔ہماری تاریخ اور ثقافت کو آئندہ کی نسلوں کے لئے محفوظ کرنے کے ساتھ ابوظہبی میں آنے والے سیاحوں کے لئے ایک پرکشش ثقافتی مرکز کے دو اہم مقاصد حاصل ہوں گے۔الحصن امارات کا ایک تاریخی اور ثقافتی ورثہ ہے، جس کے کھلنے سے ابوظہبی کے ثقافتی منصوبوں کے نئے دورکا آغاز ہوگا۔ قصر الحصن ابوظہبی شہر کی سب سے پرانی اور ثقافتی اہمیت کی حامل دو مشہورعمارتوں پر مشتمل اہم ترین جگہ ہے۔ اندرونی قلعہ کو یہاں کی مقامی آبادی کے تحفظ کے لئے سترہ سو پچانوے میں تعمیر کیا گیا جبکہ بیرونی قلعہ کی تعمیر انیس سوچالیس کی دہائی میں کی گئی۔گزشتہ دو صدیوں کے تاریخی واقعات کاعینی شاہد یہ قلعہ اس سے قبل حکمران خاندان کی رہائش گاہ،حکومت کا مرکز،مشاورتی کونسل اور نیشنل آرکائیوز کے طور پر استعمال میں رہا ہے۔جسے اب کئی سالوں سے جاری بحالی اور تحفظ کے کام کے بعد قومی یادگار کی شکل دے دی گئی ہے۔ تزئین وآرائش کے بعدکلچرل فاونڈیشن کے نئے ویژیول آرٹس سینٹر میں مختلف نوعیت کے پروگرام پیش کئے جاسکیں گے۔کلچرل فاونڈیشن کو مرحلہ وارکھولاجائے گااورسات دسمبر کوویژیول آرٹس سینٹر تک رسائی کی اجازت ہوگی جس میں نمائش کے ہالز اور سٹوڈیوز شامل ہیں۔اس موقع پر افتتاحی نمائش کا بھی اہتمام کیا جائے گا جس میں اس عمارت کی تاریخ پر فوکس ہوگا۔جبکہ باقی دو حصوں میں نو سو نشستوں پر مشتمل تھیٹر اور چلڈرن لائبریری شامل ہیں جو دوہزار انیس میں عوام کے لئے کھولے جائیں گے۔ الحصن میں قصر الحصن اور کلچرل فاونڈیشن کے ساتھ ہنرمند گھر(ہاوس آف آرٹیسانز) امارات کے ورثے کے فروغ اور تحفظ کےلئے مختص ہے۔جہاں پر نمائشیں،ورکشاپس اور روائتی دستکاریوں کے تربیتی کورسز کی سہولیات موجود ہیں ہنر مند گھر میں پیش کردہ دستکاریاں عرب امارات کے لوگوں اور مقامی طور پر دستیاب وسائل کے درمیان موجود فنی اور تخلیقی تعلق کو بیان کرتی ہیں۔ہنر مندوں نے صحرا سے نخلستان اورساحل سے سمندر تک امارات کے متنوع منظر نامہ میں معاشی اورفنی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے مہارتوں کو تخلیق کیا۔ان مہارتوں سے تخلیق کی گئی اشیا میں فن کی گہری حساسیت دکھائی دیتی ہے۔ہاو س آف آرٹیسانزعرب امارات کی روائتی دستکاریوں کی نمائش اور انہیں محفوظ کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا،جہاں پرروایتی دستکاریوں کی نمائش کے ساتھ سال بھر کے دوران ورکشاپش اور تربیتی کورسز کا انعقاد کیا جائے گا۔ الحصن کو عام کے لئے کھولنے کے موقع پر سات دسمبر سے پندرہ دسمبر تک تقریبات منائی جائیں گی۔جن میں فری ٹورز،ایونٹس اور میوزیکل پروگرامز کا انعقاد شامل ہے۔ہفتہ بھر جاری رہے والی تقریبات میں امارات کی تاریخ اور ثقافت کو پیش کرنے کے لئے روایتی دستکاریوں کو عملی طور پر پیش کیا جاے گا۔ ترجمہ۔تنویر ملک

http://wam.ae/en/details/1395302725109

WAM/Ginny Delafuente