محمد بن راشد نے دبئی کیلئے 56.8 ارب درہم کے بجٹ کی منظوری دیدی

دبئی، یکم جنوری 2019 (وام) ۔۔ دبئی کے حکمران کی حیثیت سے متحدہ عرب امارات کے نائب صدر اور وزیر اعظم شیخ محمد بن راشد آل مکتوم نے 2019 کے لئے 56.8 ارب درہم کے عوامی بجٹ قانون پر دستخط کردیئے ہیں.

دبئی حکومت نے 2019 کے مالیاتی سال کے لئےبجٹ کو 2018 بجٹ کے برابر برقرار رکھا ہے۔ مالی سال 2018 کے دوران حکومت کی جانب سے اقتصادی مراعات کے باوجود یہ تاریخ کا سب سے بڑا بجٹ تھا.

ایکسپو 2020 دبئی کے بعض بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کی تکمیل کے باوجود 2019 کے بجٹ میں بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کے لئے 9.2 ارب درہم مختص کئے گئے ہیں جس کا مقصد دبئی کے بنیادی ڈھانچے کو اپ گریڈ کرکے اسے دنیا میں کاروباری سرگرمیوں کے لئے بہترین مقام بنانا ہے.

2019 میں دبئی صحت، تعلیم اور رہائش کے شعبوں میں سماجی خدمات کی فراہمی سمیت خاندانوں کی مدد کیلئے سوشل بینیفٹس فنڈ کے قیام کیلئے اقدامات جاری رکھے گا تاکہ دبئی کو دنیا بھر میں رہنے کیلئے سب سے زیادہ بہتر شہر بنایا جاسکے.

دبئی حکومت کے محکمہ خزانہ کے ڈائریکٹر عبد الرحمن صالح نے کہا کہ دبئی مالی استحکام کو یقینی بنانے اور معاشی تشہیر کے ذریعے سرمایہ کاری بڑھانے کی خاطر آئندہ چند سال اپنے بجٹ کی کارکردگی میں مسلسل ترقی کیلئے پرعزم ہے۔ انھوں نے کہا کہ دبئی حکومت دبئی پلان 2021 کے اہداف کو حاصل کرنے کے لئے مسابقت کو بہتر بنانے کا عمل جاری رکھے گی اور دنیا کو بہترین ایکسپو کے انعقاد کے ذریعے حیران کردے گی.

الصالح نے مزید بتایا کہ دبئی حکومت منظم مالیاتی پالیسیوں پر عملدرآمد یقینی بنا کر 850 ملین درہم کا آپریٹنگ اضافہ حاصل کرنے میں کامیاب رہی ہے.

محکمہ خزانہ میں منصوبہ بندی اور بجٹ سازی شعبے کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر عارف عبدالرحمن نے کہا کہ ہم عوامی بجٹ کو بہتر بنانے اور اس کا جائزہ لینے کیلئے مسلسل کام کرتے رہتے ہیں۔ 2019 کے بجٹ کے تحت بین الاقوامی معیار پر مبنی مالی پالیسیوں پر عملدرآمد کے ذریعے دبئی پلان 2021 کی ضروریات پوری کی جائیں گی ۔ بجٹ کے تحت دبئی کی مجموعی معیشت کو مضبوط بنانے کے لئے مختلف شعبوں میں نئے اقدامات کی حمایت جاری رکھی جائے گی.

دبئی حکومت کو توقع ہے کہ عوامی محصولات 1.2 فیصد اضافے کے ساتھ 51 ارب درہم تک پہنچ جائیں گے۔ فیس میں کمی، تین سال تک فیس میں اضافہ نہ کرنے اور نئی خدمات فراہم کئے بغیر کوئی نئی فیس نہ لگانے کے فیصلوں کے باوجود یہ اضافہ دیکھنے میں آیا ہے.

محکمہ خزانہ میں میں سینٹرل اکاؤنٹس سیکٹر کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر جمال حامدالماری نے کہا کہ ہم نے ترقی کے اس عمل کو مستحکم کرنے اور جدت کے فروغ کیلئے اسمارٹ کلیکشن اور سمارٹ فنانسنگ پروگرام متعارف کرائے ہیں۔ مالیاتی ڈیٹا پلیٹ فارم کے قیام سے سرکاری اداروں، کاروبار اور افراد کے لئے مالیاتی اعداد و شمار کی دستیابی ممکن ہوگی.

مالی سال 2019 کے بجٹ میں عوامی بہبود، ایکسپو 2020 کی میزبانی کےفوائد، بنیادی ڈھانچے کی مسلسل ترقی، دوبئی پلان 2021 کے مقاصد اور دبئی کے شہریوں کی فلاح وبہبود اور خوشحالی کو مدنظر رکھا گیا ہے.

2019 بجٹ میں روزگار کے نئے مواقع کی فراہمی کے لئے حکومت کی حکمت عملی کے تحت 2,498نئی ملازمتیں دی جائیں گی۔ تنخواہ اور متعلقہ مراعات مجموعی سرکاری اخراجات کے 32 فی صد کے اندر رہیں گی.

بجٹ میں عوامی اور انتظامی اخراجات مجموعی سرکاری اخراجات کے 47 فی صد ہیں۔ ان اخراجات میں پانچ فیصد سالانہ اضافہ دیکھنے میں آیا ہے جس کا مقصد شہریوں کو بہترین صحت، تعلیم اور معاشرتی خدمات کی فراہمی ہے۔ دبئی حکومت نے بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کے لئے 9.2 ارب درہم مختص کئے ہیں .

مالی سال 2019 کا بجٹ ملک کی حقیقی سرمائے انسانی وسائل کو فروغ دینے کیلئے شیخ محمد بن راشد آل مکتوم کی ہدایات کے مطابق حکومت کے عزم کا عکاس ہے۔ بجٹ میں صحت، تعلیم، ہاؤسنگ، خواتین اور بچوں کی دیکھ بھال کے ساتھ پڑھنے، ترجمہ اور پروگرامنگ کے شعبوں کی ترقی کے کیلئے مجموعی حکومتی اخراجات میں سے 33 فیصد رکھے گئے ہیں.

اسی طرح سیکورٹی، انصاف اور تحفظ کے شعبے کے فروغ کیلئے 22 فیصد، دبئی کی معیشت، بنیادی ڈھانچے اور ٹرانسپورٹ کے شعبے کی ترقی کے لئے 40 فی صد جبکہ حکومتی کارکردگی میں بہتری، تخلیق، جدت اور سائنسی تحقیق کیلئے مجموعی اخراجات کا پانچ فیصد مختص کیا گیا ہے.

 

ترجمہ: ریاض خان

http://wam.ae/en/details/1395302730047

WAM/MOHD AAMIR