پارلیمینٹیرینز قابل تجدید توانائی کے ذرائع اختیار کرنے کی کوششیں تیز کریں،وزیربرائے موسمیاتی تبدیلی وماحول

دبئی،10 جنوری، 2019(وام)۔۔وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی وماحول ڈاکٹر ثانی بن احمد الزیودی نے دنیا بھر کے قانون سازوں سے قابل تجدید توانائی کے ذرائع کو اختیار کرنے کی کوششیں تیز کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ بین الاقوامی قابل تجدید ایجنسی کی نانویں اسمبلی سے ایک روز پہلے قانون ساز فورم دوہزار انیس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر الزیودی نے کہا کہ بحیثیت قانون ساز ہونے کے آپ قابل تجدید توانائی سے متعلق ٹیکنالوجیز کی ترقی اور ان کو اختیار کرنے کے حوالے سے پالیسی فریم ورکس اور ادارہ جاتی صلاحیت میں اضافے کے لئے اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔اپنے خطاب میں انہوں نے کہا کہ قابل تجدید توانائی کے شعبہ میں تیزرفتار ترقی دیکھی جارہی ہے۔ارینا کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق دوہزار سولہ میں قابل تجدید توانائی کی پیداوار میں چھ اعشاریہ سات فیصد اضافہ ہوا۔قابل تجدید توانائی کے حوالے سے صلاحیتوں میں اضافہ پیرس معاہدہ کے تحت ماحولیاتی اہداف کے جانب ایک اہم قدم ہے.

 

ڈاکٹر الزیودی کا کہناتھا کہ توانائی کے حوالے سے اقوام متحدہ کے پائیدار ترقی کے اہداف ایس ڈی جی سیون کا تقاضا ہے کہ دوہزار تیس تک ہم توانائی کے سستے،قابل بھروسہ،پائیدار اور جدیدذرائع تک رسائی حاصل کریں۔ایس ڈی جی سیون کے حصول کے لئے مربوط پالیسیوں کو اختیار کرنے اور فنڈنگ میں اضافہ کے ساتھ نئی ٹیکنالوجیز کو اپنانے میں آمادگی ضروری ہے.

 

امارات کی جانب سے کلین انرجی کے حصول کی کوششوں کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ امارات اپنے گرین ایجنڈا دوہزار تیس اور قومی موسمیاتی تبدیلی پلان دوہزار پچاس کے تحت اپنی اقتصادیات کو کاربن کے کم اخراج کے ساتھ گرین انرجی پر مبنی اقتصادیات پر منتقل کرنے کے لئے پرعزم ہے۔اس کے علاوہ دوہزار سترہ میں یو اے ای انرجی اسٹریٹیجی کا بھی آغاز کیا گیا جس کے تحت دوہزار پچاس تک چوالیس فیصد قابل تجدید توانائی، گیس سے اڑتیس فیصد،کلین کول سے بارہ فیصد اور جوہری ذرائع سے چھ فیصد توانائی حاصل کرنے کا ہدف رکھا گیا ہے۔ان بڑے اہداف کو حاصل کرنے کے لئے دوہزار پچاس تک ایک سو تریسٹھ ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کی جائے گی۔ کلین انرجی شعبہ میں گرین منصوبوں کے لئے کمپنیوں کو قرضے دینے کے لئے ستائیس ارب ڈالر کا ایک فنڈ بھی قائم کیا گیا۔پائیدار فنانس کے لئے امارات کی سرکردہ بتیس کمپنیوں نے دبئی ڈیکلریشن پر بھی دستخط کئے ہیں.

 

دوسرے ممالک میں قابل تجدید توانائی کی پیداوار کے لئے امارات کی کوششوں کے حوالے سے انہوں نے بتایا کہ امارات افریقہ اور دیگر جگہوں پر پینتیس کروڑ ڈالر مالیت کے ارینا اے ڈی ایف ڈی منصوبوں کے لئے فنانسنگ کررہا ہے۔ دوہزار چودہ سے بیس مختلف ممالک میں فنڈنگ کے لئے قابل تجدید توانائی کے اکیس منصوبوں کا انتخاب کیا گیا ان منصوبوں میں سولر پی وی،جیوتھرمل اور چھوٹے پیمانے کے پن بجلی منصوبے شامل ہیں۔علاوہ ازیں بحرالکاہل اور کریبین جزائر کی پانچ کروڑ امریکی ڈالرمالیت کے یو اے ای پیسیفک پارٹنرشپ فنڈ جبکہ پانچ کروڑ ڈالر مالیت کے یواے ای کریبین قابل تجدید فنڈکے ذریعے مدد کی جارہی ہے.

 

ارینا لیجسلیٹر فورم دوہزار انیس میں اقوام متحدہ کے پائیدار ترقی کے ایجنڈادوہزار تیس میں مقررکردہ ایس ڈی جی سیون کو حقیقت کا روپ دینے کے لئے متبادل توانائی کے ذرائع کو فروغ دینے میں پارلیمانی اقدامات کے کردار پر توجہ مرکوز کی گئی۔.

 

ترجمہ۔تنویرملک.

 

http://wam.ae/en/details/1395302731587

WAM/