ادنوک نے مصنوعی جزائر کی تعمیر کیلئے   5ارب درہم کا ٹھیکہ NMDC  کو دیدیا


ابو ظبی، 6 فروری 2019 (وام) ۔۔ ابو ظبی نیشنل آئل کمپنی (ADNOC) نے گھاشا کی ترقی کے پہلے مرحلے میں کئی مصنوعی جزائر کی تعمیر کے لئے ڈریجنگ، زمین کی بحالی اور بحری تعمیر کا ٹھیکہ متحدہ عرب امارات کی نیشنل میرین ڈریجنگ کمپنی (این ایم ڈی سی) کو دے دیاہے.

 

یہ ٹھیکہ 5ارب درہم یعنی 1.36 ارب ڈالر میں دیا گیا ہے اور 70 فیصد سے زائد ان کنٹری قدر حاصل کرے گا۔ گھاشا ہیل، گھاشا، دالما، نصر اور مباراض آف شور گیس فیلڈز پر مشتمل ہے۔ معاہدے کی شرائط کے مطابق،NMDC دس نئے مصنوعی جزائر اور دو راستے تعمیر کرنے کے ساتھ موجودہ جزیرےالغاف کو توسیع دے گی۔ اس منصوبے کی تکمیل میں 38 مہینے لگیں گے اور اس سے گھاشا گیس فیلڈز کی تیاری اور وہاں سے گیس کی ڈرلنگ اور پیداوار کے لئے ضروری بنیادی ڈھانچہ فراہم کرے ہوگا۔ اس منصوبے سے ساڑھے تین ہزار سے زائد افراد کو ملازمت ملنے کی توقع ہے.

 

ٹھیکہ دینے کے معاہدے پر ادنوک اپ سٹریم ایگزیکٹو ڈائریکٹر عبدالمونیم الکندی اور NMDC کے سی ای او یاسر زخلول نے دستخط کئے۔ وزیر مملکت اور ADNOC گروپ کے سی ای او ڈاکٹر سلطان احمد الجابراور NMDC کے چیئرمین محمد ثانی مرشد الرومیتھی بھی اس موقعے پر موجود تھے.

 

وزیر مملکت ڈاکٹر سلطان احمد الجابر نے کہا کہ اس معاہدے سے ہیل ، گھاشااور دلما کے آف شور گیس کے میگا پراجیکٹ میں تیز ی آئے گی جو ADNOC کی 2030 سمارٹ ترقیاتی حکمت عملی کا ایک لازمی حصہ ہے۔ انھوں نے کہا کہ دنیا کے بڑےSour گیس منصوبوں میں سے ایک یہ منصوبہ متحدہ عرب امارات کو گیس کے شعبے میں خود کفیل بناکر گیس کا برآمد کنندہ بنانے میں اہم کردار ادا کرے گا.

 

انھوں نے کہا کہ NMDC کو سخت اور مسابقتی ٹینڈر کے عمل کے بعد منتخب کیا گیا ہے۔ متحدہ عرب امارات کی کمپنی کو اس منصوبے کا ٹھیکہ دینے سے ان کنٹری قدر میں اضافہ ہوگا جس سے مقامی سطح پر اقتصادی ترقی کو سہارا ملے گا۔ انھوں نے کہا کہ یہ منصوبہ ابو ظبی کے ہائڈروکاربن وسائل سے استفادہ کرنے کا ثبوت ہے.

 

NMDC کے چیئرمین محمد ثانی مرشد الرومیتھی نے کہا کہ انھیں ADNOC کے ساتھ شراکت داری اور اس نئے میگا منصوبےکا ٹھیکہ حاصل کرنے پر فخر ہے۔ انکا کہنا تھا کہ وہ اس بات پر خوش ہیں کہ یہ منصوبہ متحدہ عرب امارات کی مقامی معیشت کی بہتری، ADNOC کی گیس کے شعبے کی ترقی اور عالمی سطح پر مقابلہ کرنے کے لئے بحری شعبے کی ترقی کے لئے متحدہ عرب امارات کی حکمت عملی میں مددگار ثابت ہوگا.

 

مصنوعی جزائر روایتی مہنگے جیک اپ آف شور ڈرلنگ رگز کی نسبت سستے اور ماحول دوست زمینی رگز ہیں۔ ان میں ڈرلنگ کیلئے روایتی رگز کی بجائے کام کرنے کیلئے زیادہ جگہ میسر آتی ہے ۔ مصنوعی جزائر کے استعمال سے کنووں کی کھدائی کیلئے 100 سے زائد مقامات پر ڈریجنگ کی ضرورت ختم ہو گئی ہے ۔ ادنوک کا مصنوعی جزائر کی تعمیر کا اچھا ریکارڈ ہے جن میں اپر زیخم کی توسیع کے منصوبے کے لئے چار مصنوعی جزائر کی تعمیر شامل ہے۔ ادنوک کا اپر زیخم فیلڈ متحدہ عرب امارات کا دوسرا سب سے بڑا آف شور آئل فیلڈ اور دنیا کا چوتھا سب سے بڑا آئل فیلڈ ہے.

 

ماحولیاتی ایجنسی کی قائم مقام سیکرٹری جنرل ڈاکٹر شیخہ سلیم الدھری نے بھی دستخطوں کی تقریب میں شرکت کی اور کہا کہ تیل کی تلاش کے ابتدائی مراحل سے ہی ادنوک ماحولیاتی ایجنسی ابو ظبی کے ساتھ قریبی شراکت داری میں کام کرتا ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ مصنوعی جزائر سمیت تیل اور گیس کے شعبے کے ترقیاتی منصوبے ماحول اور عوام دونوں کے لئے پائیدار ہیں.

 

ریاض خان .

 

http://wam.ae/en/details/1395302737584

WAM/Ahlam Al Mazrooi