عرب امارات اور امریکا میں 2017ء کو غیرتیل تجارت کا حجم 30 ارب 60 کروڑ ڈالر رہا

ابوظہبی ، 11 مارچ ، 2019 (وام) ۔۔ امریکا کیلئے عالمی تجارتی تنظیم کی تجارتی پالیسی کے جائزہ پر متحدہ عرب امارات کی وزارت معیشت کی طرف سے جاری رپورٹ کے مطابق امریکا کی طرف سے تجارتی پالیسیوں میں تبدیلی کے باوجود امریکا اب بھی ڈبلیو ٹی او کے تمام رکن ممالک کے ساتھ جائز اور مناسب تجارتی ڈیلز اور شراکت داری کررہا ہے .

رپورٹ کے مطابق امریکا نے زراعت ، اینٹی ڈمپنگ ، سبسڈیز اور مسابقتی اقدامات جیسے مختلف شعبوں میں عالمی تنظیم کو کئی نوٹی فکیشن بھیجے ہیں ۔ دنیا کے 20 ممالک کے پاس اب بھی امریکی اشیاء اور خدمات کے 14 فری ٹریڈ معاہدے موجود ہیں .

ڈبلیو ٹی او کے جائزہ کے مطابق امریکہ کی غیرملکی سرمایہ کاری کی پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی اور وہ اب بھی کھلی پالیسی ہے تاہم اس میں جوہری توانائی اور ہوابازی جیسے چند شعبوں میں محدود آڈٹ اور رکاوٹیں عائد کی گئی ہیں ۔ امریکہ کی تجارتی پالیسی میں صرف قومی سلامتی کو مدنظر رکھ کر کچھ تبدیلیاں کی گئی ہیں .

اس رپورٹ میں متحدہ عرب امارات اور امریکہ کے درمیان تجارتی تعلقات کو بہت اہم قرار دیا گیا ہے اور بتایاگیاہےکہ دونوں ممالک میں مضبوط سٹریٹجک شراکت داری موجود ہے ، اس کی وجہ سے 2017ء میں دونوں کی باہمی تجارت 30 ارب ڈالر سے زائد تھی ، اس میں امریکہ سے عرب امارات آنے والی برآمدات کی مالیت 23 ارب ڈالر اور عرب امارات سے امریکہ کو بھیجی جانے والی غیر تیل برآمدات 2 اب ڈالر کی تھیں ۔ ری ایکسپورٹ اشیاء کی مالیت 5 ارب ڈالر سے زائد رہی تھی .

عالمی تنظیم کی رپورٹ کے مطابق امریکی کی قومی پیدوار مسلسل نویں سال میں بڑھی ہے ، سال 2016ء میں یہ ایک اعشاریہ 6 فیصد بڑھی تھی جبکہ 2017ء میں اسکا اضافہ 2 اعشاریہ 2 فیصد رہا ۔ 2018ء کی دوسری سہہ ماہی میں یہ اضافہ 4 اعشاریہ ایک فیصد رکارڈ کیا گیا ہے ۔ 2014ء میں 4 اعشاریہ 2 فیصد کی یہ ترقی 2022ء تک 5 اعشاریہ 1 فیصد رہنے کی توقع ہے .

ترجمہ ۔ تنویر ملک .

http://wam.ae/en/details/1395302746443

WAM/Ahlam Al Mazrooi