متحدہ عرب امارات کے بینکوں کی کمیشن آمدنی دوہزار اٹھارہ میں اکیس ارب درہم رہی


ابوظہبی ، 3 ستمبر ، 2019 ( وام ) ۔۔ متحدہ عرب امارات کے مرکزی بینک کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق متحدہ عرب امارات میں قائم بینکوں کو دوہزار اٹھارہ میں کمیشن آمدنی کی مد میں اکیس ارب درہم وصول ہوئے جس میں قومی بینکوں کا حصہ بیاسی عشاریہ آٹھ فیصد ، یعنی سترہ ارب چالیس کروڑ درہم ہے.

 

غیر ملکی بینکوں کی کمیشن آمدنی تین ارب چالیس کروڑ درہم رہی جبکہ باقی رقم ملک میں کام کرنے والے خلیجی بینکوں کی شاخوں کے حصہ میں آئی۔یہ قابل ذکر ہے کہ متحدہ عرب امارات میں ساٹھ بینک کام کررہے ہیں.

 

سی بی یو اے ای کی مالی استحکام رپورٹ دوہزار اٹھارہ کے مطابق اس دوران ، دوہزار اٹھارہ کے اختتام پر نقداثاثوں کی مالیت چار سو چودہ ارب درہم تک پہنچ گئی، جس میں سی بی یو اے ای سرٹیفکیٹ آف ڈیپازٹس کے ایک سواڑتیس ارب درہم کے اثاثے،قانونی ذخائر ایک سو بیس ارب درہم ، ایک سو سات ارب درہم کی ملکی اور غیر ملکی قرضوں کی سیکیورٹیز اور انچاس ارب درہم کے نقد اورجاری اکاونٹس کے اثاثے شامل ہیں.

 

دیگر آپریٹنگ آمدنی میں ٹریڈنگ آمدنی ، مشتق آمدنی ، فیس اور کمیشن کی آمدنی ، اور آمدنی کے دیگر سلسلے شامل ہیں.

 

متحدہ عرب امارات کے قومی بینکوں کا خالص منافع دوہزار اٹھارہ میں بارہ فیصد سالانہ اضافہ کی شرح سے بیالیس ارب ساٹھ کروڑ درہم سے تجاوز کرگیا.

 

رپورٹ کے مطابق متحدہ عرب امارات کے بینکاری نظام کی آپریٹنگ کارکردگی میں لاگت اور آمدنی کے تناسب میں بہتری آئی ہے۔ لاگت سے آمدنی کا مجموعی سالانہ تناسب دوہزار اٹھارہ میں کم ہوکر پینتیس عشاریہ نو فیصد رہ گیا جو دوہزار سترہ میں انتالیس عشاریہ ایک فیصد تھا.

 

دوہزار اٹھارہ کے دوران لاگت کی کارکردگی میں بہتری بنیادی طور پر کم آپریٹنگ اخراجات کی وجہ سے آئی ، جس میں سات فیصد کمی واقع ہوئی۔ ابو ظہبی بینکنگ کے شعبے میں انضمام سے بھی لاگت کی کارکردگی بہتر ہونے میں مدد ملی.

 

ترجمہ۔تنویر ملک.

 

http://wam.ae/en/details/1395302783609

WAM/Urdu