ھزع بن زاید نے 24 ویں عالمی توانائی کانگریس کا افتتاح کردیا

  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين
  • هزاع بن زايد يفتتح مؤتمر الطاقة العالمي الرابع والعشرين

ابوظبی، 9 ستمبر، 2019 (وام) ۔۔ متحدہ عرب امارات کے صدر عزت مآب شیخ خلیفہ بن زاید آل نھیان کی سرپرستی میں ابو ظبی ایگزیکٹو کونسل کے نائب چیئرمین شیخ ھزہ بن زاید آل نھیان نے ابو ظبی قومی نمائش سینٹر میں 24 ویں عالمی توانائی کانگریس کا باضابطہ افتتاح کیا.

افتتاحی تقریب میں ابو ظبی کے ولی عہد کے دیوان کے سربراہ شیخ حمید بن زاید آل نھیان ، ابو ظبی ایگزیکٹو کونسل کےرکن اور ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین شیخ خالد بن محمد بن زاید آل نھیان ، وزیر رواداری شیخ نھیان بن مبارک آل نھیان، وزیر توانائی و صنعت سہیل بن محمد فراج فارس المزروئی اور سعودی وزیر توانائی شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان بن عبد العزیز آل سعوداور متعدد شیوخ شریک تھے.

تقریب میں عالمی توانائی کونسل کے چیئر مین ینگون ڈیوڈ کم، متعدد وزراء اور سفیروں سمیت مقامی، علاقائی اور بین الاقوامی مندوبین، سی ای اوز اور دنیا بھر سے وسیع توانائی کمپنیوں اور تنظیموں کے اعلیٰ سطح نمائندے بھی شریک تھے.

شیخ ھزع نے تقریب میں شریک رہنماؤں، فیصلہ سازوں اور عالمی ماہرین کا خیرمقدم کیا جو پہلی مرتبہ مشرق وسطی میں ہونے والی ورلڈ انرجی کانگریس میں اپنے علم اور مہارت سے شرکاء کو آگاہ کریں گے۔ انھوں نے کہا کہ کانگریس کی میزبانی ابوظبی اور متحدہ عرب امارات کے توانائی کے عالمی شعبے میں کلیدی کردار کی عکاسی کرتی ہے.

شیخ ھزع نے سعودی وزیر توانائی شہزادہ عبد العزیز بن سلمان بن عبد العزیز آل سعود، عراق کے نائب وزیر اعظم برائے توانائی امور اور وزیر تیل کے ہمراہ عالمی توانائی کانگریس کے نمائشی حصے کا دورہ کیا ۔ نمائش میں 300 سے زیادہ کمپنیاں اور ادارے حصہ لے رہے ہیں .

متحدہ عرب امارات کے وزیر توانائی سہیل بن محمد فراج فارس المزروئی نے کہا کہ عالمی توانائی کانگریس اس بات کا ثبوت ہے کہ متحدہ عرب امارات اور اس میں شریک ممالک اور ادارے سب کے لئے ایک بہتر کل پر توجہ مرکوز کررہے ہیں.

انھوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات نے عالمی توانائی کے شعبے میں بہت ساری کلیدی تنظیموں کے ساتھ شراکت داری کی ہے۔ انکا کہنا تھا کہ وہ سب کو ایک ہی راہ پر گامزن کرنا چاہتے ہیں تاکہ سب کے ساتھ ہم آہنگی پیدا کرکے ایک پائیدار مستقبل کو ممکن بنایا جائے.

انہوں نے کہا کہ ورلڈ انرجی کانگریس کے دوران ہم مختلف ممالک کے ان تجربات سے سیکھیں گے جو قابل تجدید ذرائع کو توانائی کے دیگر ذرائع سے مربوط کرتے ہیں.

المزروئی نے کہا کہ تیل اور گیس کے شعبے کے اندر ڈیٹا ٹیکنالوجیز اور مصنوعی ذہانت کا فائدہ اٹھانا، لاگت کو کم کرنے، کارکردگی کو بہتر بنانے اور منافع میں اضافے کے لئے ہماری حکمت عملی کے بنیادی ستون ہیں.

24 ویں ورلڈ انرجی کانگریس اس ایونٹ کی تاریخ میں سب سے بڑی کانگریس ہوگی۔ چار روزہ کانگریس میں انڈسٹری کو درپیش انتہائی اہم امور کو حل کرنے پر غور کیا جائے گا.

عالمی توانائی کونسل کے چیئر مین ینگون ڈیوڈ کم نے وہ توانائی کے شعبے میں تبدیلی کی ضرورت سے آگاہ ہیں۔ ڈیوڈ کم نے کہا کہ ورلڈ انرجی کانگریس میں انھوں نے تخلیقی پالیسی کی سوچ اور کاروباری جدت طرازی کے ساتھ موجودہ اور آوٹ آف باکس ٹیکنالوجی کے استعمال کو یکجا کرنے کی فوری ضرورت کو تسلیم کیا ہے.

وزیر مملکت اور ادنوک گروپ کے سی ای او ڈاکٹر سلطان بن احمد سلطان الجابر نے کہا کہ 150 سے زیادہ ممالک کے مندوبین کی میزبانی کرکے ابو ظبی توانائی کے شعبے کے رہنماؤں اور پالیسی سازوں کو اہم امور پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے ایک اہم پلیٹ فارم مہیا کررہا ہے .

ترجمہ: ریاض خان .

http://wam.ae/en/details/1395302785349

WAM/Urdu