عرب امارات کی جانب سے شام میں سیاسی حل کے مطالبے کا اعادہ


جنیوا ، 18 ستمبر ، 2019 (وام) ۔۔ اماراتی نمائندے نے جنیوا میں اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے 42 ویں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ عرب امارات نے شام کے عوام کی تکایف کے خاتمے کی عالمی کوششوں میں مدد کے لئے کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی.

 

وزارت برائے امور خارجہ و بین الاقوامی تعاون کے جمال عزام نے شام کے بارے میں آزاد بین الاقوامی تحقیقاتی کمیشن کی طرف سے منعقدہ مباحثے میں عرب امارات کے موقف کو پیش کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی قرارداد 40/17 کے مطابق جنگ سے تباہ حال ملک کی تازہ ترین صورتحال سے آگاہ کرنے کی کمیشن کی کوششوں کو سراہا.

 

انہوں نے شام کی بگڑتی ہوئی صورتحال ،بچوں ، خواتین اور بوڑھے افراد سمیت ہزاروں بے گناہ شہریوں کے بے گھر ہونے پر متحدہ عرب امارات کی تشویش کا اظہار کیا.

 

انہوں نے کہا ، "دوہزار بارہ کے بعد سے عرب امارات نے اردن ، لبنان ، عراق اور یونان میں شامی مہاجرین کے علاوہ داخلی طور پر بے گھر ہونے والے افراد کے لئے ایک ارب دس لاکھ ڈالر کی امداد فراہم کی ہے۔"

"امداد کا ایک حصہ عوامی صحت ، ترقی اور پینے کے پانی کے شعبوں میں متعدد منصوبوں کی مالی اعانت کے لئے مختص کیا گیا یہ رقہ کے علاقے میں استحکام کے پروگرامز کے ساتھ ساتھ شام ریکوری ٹرسٹ فنڈ کی مددکے علاوہ ہے۔ "

انہوں نے عالمی برادری سے شامی عوام کی مدد کی کوششیں جاری رکھنے کا مطالبہ کیا تاکہ متاثرہ آبادی کی خدمات تک رسائی کو یقینی بنایا جاسکے.

 

عزام نے شام کے لئے اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کے خصوصی ایلچی گیئر او پیڈرسن کی کوششوں اور اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 2254 کے مطابق جامع معاہدے پر اطلاق سمیت ان کی سیاسی کوششوں کو سراہا۔انہوں نے مزید کہاکہ"دمشق میں اماراتی سفارت خانہ دوبارہ کھولنا شام کی موجودہ صورتحال میں عرب ممالک کے کردار کو متحرک کرنے کے ہمارے مطالبے کا اظہار ہے۔ "

"عرب امارات شام میں امن اور استحکام کی بحالی اور شامی عوام کی جائز خواہشات کو پورا کرنے کے لئے تنازعہ کے پرامن حل کے لئے موثر عرب کردار کی اہمیت پریقین رکھتا ہے۔ "

ترجمہ۔تنویر ملک.

 

http://wam.ae/en/details/1395302787757

WAM/Urdu