دوطرفہ تعلقات کا بھارتی معیشت پانچ کھرب ڈالر بنانے میں کلیدی کردار ہوگا:اماراتی حکام


دبئی ، 6 نومبر ، 2019 (وام) ۔۔ متحدہ عرب امارات بھارت اقتصادی فورم کا پانچواں اجلاس حال ہی میں والڈورف آسٹوریا دبئی انٹرنیشنل فنانشل سنٹر میں ہوا ، جس میں دونوں ممالک کی اعلی شخصیات ،عہدیداروں ، سرکردہ ماہرین اور رہنماوں نے شرکت کی۔ وزارت اقتصادیات کے خارجہ تجارت و صنعت کے انڈر سکریٹری عبد اللہ احمد الصالح نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کے ساتھ شراکت داری بھارت کے 2022 تک 5 کھرب ڈالر کی اقتصادیات بننے کی جانب کلیدی کردار ادا کرے گی۔ بزنس لائیو مڈل ایسٹ کے زیر اہتمام فورم کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ، الصالح نے کہا کہ مستحکم باہمی تعلقات دونوں ممالک کی سیاسی وابستگی اور باہمی مفاد کے لئے مل کر کام کرنے کی مستقل کوششوں کا نتیجہ ہیں۔ الصالح نے کہا کہ متحدہ عرب امارات بھارت اعلی سطح کی مشترکہ ٹاسک فورس برائے سرمایہ کاری دوطرفہ ضروریات اور مستقبل کے ویژن کے لئے بات چیت کرنے کا ایک پلیٹ فارم ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ "ایکسپو 2020 میںہم بھارت کے سب سے بڑے پویلین کا مشاہدہ کریں گے ، جو دوطرفہ معاشی تعلقات کو فروغ دینے کا ثبوت ہے۔"

الصالح نے کہا کہ متحدہ عرب امارات بھارت میں سرمایہ کاری کرنے والا عرب خطے کا سب سے بڑا ملک ہے جو کل عرب سرمایہ کاری کا 81.2 فیصد ہے۔ بھارت کی 2.8 ٹریلین ڈالر کی معیشت میں امارات کی لگ بھگ 10 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری شامل ہے جس میں 5 ارب ڈالر کی براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری بھی شامل ہے۔ انہوں نے کہاکہ " بھارت کے بیرون ملک کسی بھی ملک میں تارکین کی سب سے بڑی تعداد عرب امارات میں ہے جو سالانہ 17 ارب ڈالر سے زیادہ ترسیلات زر اپنے ملک بجھواتے ہیں۔"

فورم میں مندوبین نے بنیادی ڈھانچے ، بینکنگ ،فنانس ، فن ٹیک ، حفظان صحت ، فوڈ کوریڈورز ، سمارٹ سٹیزاور اسٹارٹ اپس سے متعلق شراکت داری کے نئے مواقعوں پر غور کیا۔ عرب امارات بھارت اقتصادی فورم نے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو فروغ دینے کی کوششوں پرحکومتی اور صنعتی رہنماوں کوقضاة التغیر ایوارڈ ز سے نوازا۔ (تصویری کریڈٹ: بز نس لائیو مڈل ایسٹ) ترجمہ۔تنویر ملک http://wam.ae/en/details/1395302800483

WAM/Urdu