قیادت کے وژن کے مطابق ملک کو گیس میں بھی خودکفیل بنانے کیلئے کوشاں ہیں: سلطان الجابر


ابوظبی، 25، نومبر ، 2019 (وام) ۔۔ متحدہ عرب امارات کے نائب صدر، وزیر اعظم اور دبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد آل مکتوم اور ابو ظبی کے ولی عہد اور متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے ڈپٹی سپریم کمانڈر شیخ محمد بن راشد آل نھیان نے متحدہ عرب امارات کے تیسرے حکومتی اجلاسوں کے دوران "تیل کا مستقبل" کے حوالے سے سیشن میں شرکت کی۔ متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت اور ادنوک گروپ کے سی ای او ڈاکٹر سلطان الجابر نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کی قیادت کے وژن نے توانائی اور تیل کے مستقبل کے لئے ایک طویل المیعاد مستقبل کا وژن قائم کیا جس کا مقصد اس شعبے میں متحدہ عرب امارات کے قائدانہ کردار کو مزید تقویت دینا ہے۔ انھوں نے کہا کہ دانشمندانہ قیادت کی ہدایت کے مطابق اور ابو ظبی کے ولی عہد اور متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے ڈپٹی سپریم کمانڈر شیخ محمد بن زاید آل نھیان کی حمایت اور رہنمائی میں ادنوک نے تمام کاروباری مراحل اور پہلوؤں کا استعداد بڑھانے کیلئے ایک جامع اسٹریٹجک تبدیلی کا آغاز کیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس اسٹریٹجک تبدیلی کا مقصد قیادت کے اس وژن کو حاصل کرنا ہے جس میں تیل معیشت کی ریڑھ کی ہڈی ہے اور اس نے ترقی اور استحکام میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ سلطان الجابر نے کہا کہ یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم انسانی وسائل میں سرمایہ کاری کرکے مستقبل کی تشکیل میں بھی اس کے کردار میں تسلسل کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ ابھرتی ہوئی ایشین معیشتوں کی طلب میں اضافے کے نتیجے میں آئندہ دہائیوں میں تیل کی طلب میں اضافہ ہوتا رہے گا۔ قابل تجدید اور متبادل توانائی کے شعبے میں زبردست ایجادات کے باوجود توانائی کی عالمی طلب کا نصف سے زیادہ تیل اور گیس سے پورا کیا جائے گا۔ انکا کہنا تھا کہ معاشی نمو میں تنوع اور استحکام میں شراکت کے لئے ویلیو چین کے تمام مراحل اور پہلوؤں، پیٹرو کیمیکلز اور مینوفیکچرنگ صنعتوں میں سرمایہ کاری کی کارکردگی کو بہتر بنانا ضروری ہے۔ شیخ سلطان الجابر نے کہا کہ پیداوار کی لاگت کو کم کرنے پر توجہ مرکوز کے ساتھ ساتھ تسلسل بھی ایک اہم عنصر ہے۔ ادنوک کے سی ای او نے کہا کہ کمپنی نے پیداواری صلاحیت میں اضافہ کرتے ہوئے اخراجات کو کم کرنے پر توجہ دی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ملکی معاشی پروگرام میں توسیع کے ذریعے مقامی معیشت میں اخراجات میں اضافہ کرکے 2019 میں مقامی معیشت کے لئے 26 ارب درہم پیدا کئے گئے۔ الجابر نے کہا کہ کاروبار میں مسلسل ترقی اور تلاش کی کوششوں کے نتیجے میں تیل کی پیداوار میں 7 ارب بیرل جبکہ گیس کے ذخائر میں 168ارب مکعب فٹ کا اضافہ ہوا۔ اس کے نتیجے میں متحدہ عرب امارات دنیا میں تیل اور گیس کے سب سے بڑے ذخائر کی درجہ بندی میں 7 ویں سے چھٹے نمبر پر آگیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ صنعتی شعبے کو ترقی دینے اور معیشت کو متنوع بنانے کی قومی حکمت عملی کے مطابق ادنوک متحدہ عرب امارات کو گیس کے شعبے میں بھی خود کفیل بنانے کیلئے کوشاں ہے۔ الجابر نے کارکردگی اور پیداوار میں اضافے کیلئے مصنوعی ذہانت اور ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کے استعمال کی ضرورت پر زور دیا۔ انھوں نے کہا کہ ادنوک نے لاگت کم کرنے، عمل کو تیز کرنےاور ماحولیاتی آلودگی کم کرنے کے لئے پہلے ہی ان ٹیکنالوجیز سے فائدہ اٹھانا شروع کردیا ہے ۔ الجابر نے متحدہ عرب امارات کی حکومت کے سالانہ اجلاسوں کے منتظمین کی کاوشوں کو سراہا اور کہا کہ اس قسم کےاجلاس قومی قیادت کے وژن کو عملی جامہ پہنانے میں مدد گار ثابت ہوتے ہیں ۔ ترجمہ: ریاض خان ۔ http://www.wam.ae/en/details/1395302805995

WAM/Urdu