شیخ زاید ہاوسنگ پروگرام1999سے 67,000 افراد کو  17.5ارب  درہم فراہم کرچکا ہے


دبئی، 2 دسمبر ، 2019 (وام) ۔۔ انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ کے وزیر اور شیخ زاید ہاؤسنگ پروگرام کے چیئرمین ڈاکٹر عبد اللہ بن محمد بلحیف النعیمی نے کہا ہے کہ یہ پروگرام 1999 سے اب تک ملک بھر میں رہائشی امداد سے متعلق 17.5 ارب درہم مالیت کے 67,000 فیصلے جاری کر چکا ہے۔ ان میں نئے مکانات کی تعمیر اور پرانے مکانات کی دیکھ بھال کے لئے گرانٹ اور قرضے بھی شامل ہیں۔ متحدہ عرب امارات کے 48 ویں قومی دن کے موقع پر ڈاکٹر النعیمی نے بتایا کہ اس پروگرام کا بنیادی ہدف متحدہ عرب امارات کے شہریوں کی رہائشی ضروریات پورا کرنا ہے۔ اس مقصد کیلئے گھروں کیلئے امداد کی فراہمی کے عمل کو آٹھ سال سے کم کرکے چند مہینے کردیا گیا ہے۔ اس اقدام سے ہاؤسنگ ایڈ وصول کرنے والے شہریوں کی درخواستوں کی شرح 90 فیصد سے تجاوز کرگئی ہے جو پروگرام کے آغاز کے وقت 30 فیصد سے بھی کم تھی۔ النعیمی نے کہا کہ اس سال اکتوبر تک ہونے والے ہاؤسنگ سپورٹ فیصلوں کی مالیت 2.8 ارب درہم تھی جو 2001 کے مقابلے میں 740 فیصد زیادہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس پروگرام نے بزرگ شہریوں اور معذور افراد کیلئے بھی 1,051رہائشی امداد کے فیصلے جاری کئے ہیں جن کی لاگت 500ملین درہم ہے۔ پروگرام کے آغاز سے اب تک 1.5 ارب درہم کی لاگت سے 35,000مکانات جبکہ رہائشی محلوں کے ذریعے متحدہ عرب امارات کے شہریوں کو 1,490رہائشوں کی فراہمی کا عمل مکمل ہوچکا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ یہ پروگرام 2019 سے ملک بھر میں رہائشی منصوبوں کے ایک پیکیج پر عمل درآمد کر رہا ہے جس میں گیارہ ہزار انفرادی رہائشیں اور ہاوسنگ یونٹس میں 2,936 مکانات شامل ہیں۔ یہ بالترتیب 2020 اور 2021 میں فراہم کیے جائیں گے النعیمی نے کہا کہ 2019 سے 2025 تک آنے والے مستقبل کے رہائشی منصوبوں کی تعداد 17,873اور انکی لاگت 17.32 ارب درہم ہے۔ اس کے علاوہ رہائشی محلوں میں 5,134مکانات زیر تعمیر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پروگرام کے آئندہ پانچ سال کے منصوبوں کی لاگت 22.32 ارب درہم ہونے کی توقع ہے۔ ترجمہ: ریاض خان ۔ http://www.wam.ae/en/details/1395302807797

WAM/Urdu