منگل 14 جولائی 2020 - 11:16:12 صبح

متحدہ عرب امارات:کوویڈ-19 سے صحت یاب ہونے والوں کی تعداد17ہزار546 ہوگئی،726 نئے کیسز کی نشاندہی

  • الإمارات تعلن ارتفاع عدد حالات الشفاء إلى 17546 حالة و الكشف عن 726 إصابة جديدة بمرض كورونا
  • الإمارات تعلن ارتفاع عدد حالات الشفاء إلى 17546 حالة و الكشف عن 726 إصابة جديدة بمرض كورونا
  • الإمارات تعلن ارتفاع عدد حالات الشفاء إلى 17546 حالة و الكشف عن 726 إصابة جديدة بمرض كورونا
  • الإمارات تعلن ارتفاع عدد حالات الشفاء إلى 17546 حالة و الكشف عن 726 إصابة جديدة بمرض كورونا
ویڈیو تصویر

ابو ظہبی، 30 مئی ، 2020 (وام) ۔۔ متحدہ عرب امارات میں 42ہزار624 شہریوں اور رہائشیوں کے کوویڈ-19 کے اضافی ٹیسٹ کئے گئے جس کے نتیجہ میں 726 نئے کیسز کی تشخیص سے ملک میں اس وبا کے مجموعی کیسز کی تعداد33ہزار896 ہوگئی ہے۔ مجموعی کیسز میں زیرعلاج ،صحت یاب ہونے والے اور مرنے والوں کی تعداد شامل ہے۔ضروری طبی نگہداشت کرنے کے بعد مجموعی طور پر 449 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں ، جس سے ملک میں صحت یاب ہونے والوں کی مجموعی تعداد 17ہزار 546 ہوگئی ہے۔ یہ اعلان ہفتہ کو ابوظہبی میں میڈیا بریفنگ کے دوران کیا گیا جس میں حکومت کی ترجمان ڈاکٹر آمنة الضحاك الشامسي نے کورونا وائرس سے متعلق پیشرفت اور اس کے اثرات کو کم کرنے کے لئے اٹھائے گئے اقدامات کے بارے تازہ ترین معلومات فراہم کیں۔ بریفنگ کے دوران ڈاکٹرالشامسي نے کوویڈ-19 سے دو مریضوں کی موت کا اعلان کیا جس سے اموات کی مجموعی تعداد 262 ہوگئی ہے۔انہوں نے مزید بتایا کہ کوویڈ-19 کے مرض کے زیرعلاج مختلف قومیتوں سے تعلق رکھنے والے کیسز کی تعداد 16ہزار88 ہے۔ بریفنگ سے خطاب کرتے ہوئے صحت کے ریاستی شعبے کی ترجمان ڈاکٹر فریدہ الحوسنی نے عوام کو انفکشن سے بچنے کے لئےاحتیاطی تدابیر کی پابندی کرنے اور تمام ضروری طبی مشوروں پر عمل پیرا ہونے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایک نئی حقیقت کا سامنا کررہے ہیں جہاں ہمیں ایک نیا طرز زندگی اپنانا ہوگا۔ جسمانی دوری کے اصولوں سمیت تمام احتیاطی تدابیر کی مکمل طور پر پابندی کرنا ہوگی ۔ دنیا میں وائرس کی شدت میں کمی کی اطلاعات کے حوالے سے میڈیا کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے الحوسنی نے کہا واضح طور پر اس بات کی تصدیق کرنا مشکل ہے کہ عالمی سطح پر وائرس کم ہونا شروع ہو گیا ہے۔ اقدامات کے مطابق یہ معاملہ ایک ملک سے دوسرے ملک میں مختلف ہے۔ کچھ ممالک میں انفیکشن میں اضافہ ہورہا ہے اور کچھ دیگر ممالک میں قابل ذکر حد تک کمی واقع ہو رہی ہے۔عالمی ادارہ صحت کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق عالمی سطح پر کیسز کی تعداد میں اب بھی اضافہ ہورہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یورپ میں روزانہ کی بنیاد پر کیسز اور اموات کی تعداد میں نمایاں کمی واقع ہو رہی ہے۔جنوبی امریکہ میں انفیکشن اور اموات کی تعداد بڑھ رہی ہے جیسے کہ کچھ جنوب مشرقی ایشیائی ممالک اور مشرق وسطی کا معاملہ ہے۔ اسی طرح ہم یہ نہیں کہہ سکتے کہ وائرس ختم ہورہا ہے۔ اس حوالے سے کہ کیا معاشی سرگرمیوں کوبحال کرنے کے فیصلے کے بعد انفیکشن کی تعداد میں اضافہ ہوسکتا ہے الحوسنی نے کہا یہ فیصلہ تمام پیشرفتوں کے مکمل جائزہ کے بعد لیا گیا ہے۔یہ ممکن ہے کہ انفیکشن کی تعداد میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ یہ سب اس بات پر منحصر ہے کہ لوگ احتیاطی تدابیر کی پابندی کس طرح کرتے ہیں۔ الحوسنی نے سوشل میڈیا کی ان افواہوں کی تردید کی ہے کہ کوویڈ-19 وائرس کے بجائے بیکٹیریا کی وجہ سے ہوتا ہے۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ تمام جائزوں نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ یہ بیماری سارس کووی وائرس کی وجہ سے ہوئی ہے۔ الحوسنی نے بتایا کہ ایسپرین کوویڈ-19کے علاج کے لئے استعمال نہیں کی جارہی بلکہ کئی ایک موثر دوائیں استعمال کی جارہی ہیں۔ ترجمہ۔تنویر ملک http://wam.ae/en/details/1395302845399

WAM/Urdu