ہفتہ 26 ستمبر 2020 - 4:23:30 صبح

دبئی چیمبر نے خلائی صنعت کی صلاحیت پر وائٹ پیپر جاری کردیا


ابوظبی، 15 ستمبر،2020 (وام) ۔۔ دبئی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے جاری کردہ ایک نئے وائٹ پیپر کے مطابق اگلے 50 سالوں میں متحدہ عرب امارات کی خلائی صنعت ترقی کرنے والے شعبوں میں سے ایک ہوسکتی ہے۔ '' متحدہ عرب امارات کے لئے خلائی معیشت میں سرمایہ کاری کے مواقع '' کے عنوان سے اس رپورٹ میں خلائی معیشت کے ان 10 شعبوں کی نشاندہی کی گئی ہے جو متحدہ عرب امارات کے لئے سب سے زیادہ سرمایہ کاری کے امکانات پیش کرتے ہیں۔ ان میں خلائی کان کنی، خلائی اسٹیشن، خلائی آبادکاری، خلائی قانون، خلا اور ری سائیکلنگ میں استحکام، خلائی سیاحت، خلائی کمپنیاں اور خلائی اکیڈمیاں شامل ہیں ۔ 2019 میں بین الاقوامی خلائی اسٹیشن پر پہلے اماراتی خلاء باز کو بھیجنے اور اس سال کے شروع میں مریخ مشن سے خلائی تحقیق کی عالمی صنعت میں متحدہ عرب امارات کی پوزیشن مزید مضبوط ہوگئی ہے۔ ان اقدامات سے سرمایہ کاری کے نئے مواقع پیدا ہونے کے ساتھ سرکاری اور نجی شعبے کی شراکت داری کی راہ ہموار ہو رہی ہے جو متحدہ عرب امارات کی خلائی معیشت کو نئی بلندیوں تک لے جاسکتی ہے۔ اس سے ملک کی معاشی مسابقت بڑھے گی اور عالمی سطح پر جدت پسندی میں متحدہ عرب امارات کی حیثیت مزید مستحکم ہوگی ۔ رپورٹ میں وضاحت کی گئی ہے کہ ایلون مسک کے اسپیس ایکس، جیف بیزوس کے بلو اوریجن اور رچرڈ برانسن کے ورجن گلیٹک کو دیکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ عالمی خلائی دوڑ میں اب ممالک اور حکومتوں کا غلبہ نہیں ہے کیونکہ ارب پتی افراد اور دیگر نجی کاروبار اس شعبے میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کررہے ہیں ۔ چونکہ یہ صنعت نجکاری کی طرف بڑھ رہی ہے اس لئے توقع کی جارہی ہے کہ اس شعبے میں کاروبار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔ اس تحقیق میں مخصوص شعبوں کی نشاندہی کی گئی ہے جہاں نجی شعبہ عالمی خلائی معیشت کو آگے بڑھانے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔ ان میں سیٹلائٹ سروسنگ، چھوٹے مصنوعی سیارے، روبوٹک کان کنی، بائیومیڈیکل ایپلی کیشنز کے لئے مائکروگریوٹی ریسرچ، لانچ گاڑیوں کے مائع راکٹ انجن، وائرلیس پاور، خلائی مواصلات اور زمین کے مشاہدے کے اعداد و شمار اکھٹا کرنا شامل ہیں۔ اس سلسلے میں سرکاری اور نجی شعبے کی شراکت داری مستقبل کی ترقی اور پیشرفت کی راہنمائی کا ایک اہم عنصر ثابت ہوسکتی ہے۔ وائٹ پیپر کے بارے میں تبصرہ کرتے ہوئے دبئی چیمبر میں انٹرپرینیورشپ کی منیجر نتالیہ سیچوا نے کہا کہ سائنس اور ٹیکنالوجی میں پیشرفت نئی خلائی معیشت میں سرمایہ کاری کے بہت زیادہ مواقع پیدا کررہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ مستقبل اور اس کیلئے پالیسیوں پر اپنی نگاہ رکھنے والی قیادت کے ساتھ متحدہ عرب امارات نئی صلاحیتوں سے بھرپور استفادہ کرنے کے پوزیشن میں ہے ۔ متحدہ عرب امارات کی قیادت عالمی شراکت داروں کے تعاون سے خلائی صنعت کو فروغ دینے کیلئے بھرپور اقدامات کررہی ہے۔ ترجمہ: ریاض خان ۔ http://www.wam.ae/en/details/1395302870073

WAM/Urdu