منگل 24 نومبر 2020 - 7:54:15 شام

ایم او ایچ اے پی شعبہ صحت میں مصنوعی ذہانت اور جدت کو فروغ دینے کے ایچ سی ایف ایل میں شامل


دبئی، 19 نومبر، 2020 (وام) ۔۔ متحدہ عرب امارات کی وزارت برائے صحت و تدارک امراض نے حال ہی میں ایچ سی ایف ایل منصوبے کے بنیادی اصولوں کو مرتب کرنے کے لئے مفاہمت کی یاد داشت پر دستخطوں کی تقریب میں شرکت کی جس کا مقصد صحت کی دیکھ بھال کے شعبوں میں ڈیجیٹلائزیشن اور مصنوعی ذہانت کے استعمال کی حوصلہ افزائی کرنااور مستقبل کی جدت اور ٹیکنالوجی ایپلی کیشنز اور سائنسی دریافت کو فروغ دے کر کینسر کا پتہ لگانا ہے۔ اس معاہدے میں عالمی مشترکہ اقدام کے تحت اگلے دس سالوں تک صحت کی دیکھ بھال کے شعبہ کی ترقی کی کلید کے طور پر موثر اور پائیدار تعاون کے فروغ کے لئے ترجیحی شعبوں اور مشترکہ اہداف کا تعین کیا جائے گا۔ وزارت صحت اور تدارک امراض کے علاوہ ایچ سی ایف ایل اتحاد میں بھارت سے آسترا زینیکا ، ٹرائکگ ہیلتھ اور نیس کام ،روس سے اسکولوکوف،ہالینڈ سے جنرل پریکٹیشنرز ریسرچ انسٹی ٹیوٹ،جی پی آر آئی ، تائیوان کی تائے پہ میڈیکل یونیورسٹی، سنگاپورکی سا سوی ہاک اسکول آف پبلک ہیلتھ ، نیشنل کینسر سینٹر سنگاپور این سی سی ایس اورروس کا سبر بینکاور فلپس ریسرچ شامل ہیں سپورٹ سروسز سیکٹرکےاسسٹنٹ انڈر سیکرٹریعوض صغيرالكتبي نے اجتماعی ذمہ داری کے ساتھ ایک منفرد عالمی اتحاد کے اندر جدت کی بنیاد پر مستقبل کی صحت کی دیکھ بھال کو فروغ دینے میں مفاہمت نامہ کی اہمیت پر زور دیا تاکہ زیادہ سے زیادہ مریضوں کی جدید نظام صحت تک رسائی کو ممکن بنایاجاسکے۔ الكتبي نے کینسر سے متعلقہ بیماریوں اور اموات کو روکنے کے لئے ایم ایچ اے پی کی حکمت عملی پر روشنی ڈالی ۔ڈائریکٹرٹریننگ اینڈ ڈویلپمنٹ سنٹراور چیف انوویشن آفیسرصقرالحميري نے صحت کی دیکھ بھال کرنے والی مختلف ٹکنالوجیز اور جدید ایپلی کیشنز کی تیاری کے لئے جدت ، بین الاقوامی تعاون ، اور معروف بین الاقوامی اداروں کے ساتھ شراکت کے مواقع بڑھانے کے لئے ایچ ایف سی ایل گروپ میں شرکت کی اہمیت کو بیان کیا۔انہوں نے کہا کہ اس مفاہمت کا مقصد کینسر کا جلد پتہ لگانے اور صحت کی دیکھ بھال میں اے آئی الگورتھم پر مبنی موزوں علاج معالجے کے ذریعے مریضوں کے لئے نتائج کو بہتر بنانا ہے۔ ترجمہ۔تنویر ملک http://www.wam.ae/en/details/1395302888000

WAM/Urdu