ہفتہ 27 فروری 2021 - 5:40:46 صبح

جامعہ خلیفہ کا الدار پراپرٹیز اور صندوق الوطن کے ساتھ تحقیقاتی شراکت داری کا معاہدہ

  • جامعة خليفة توقع اتفاقية بحثية بتمويل مشترك من
  • جامعة خليفة توقع اتفاقية بحثية بتمويل مشترك من
  • جامعة خليفة توقع اتفاقية بحثية بتمويل مشترك من

ابوظہبی ، 17 جنوری ، 2021 (وام) ۔۔ خلیفہ یونیورسٹی برائے سائنس و ٹیکنالوجی نے کلر بلائنڈنس کا شکار لوگوں کیلئے سستے ، دوبارہ قابل استعمال اور تلف کئے جانے کے قابل کانٹیکٹ لینز تیار کرنے کیلئے ایک تحقیقی معاہدے پر دستخط کردیئے ، اس تحقیق کیلئے مالی وسائل کی فراہمی میں للدر پراپرٹیز اور صندوق الوطن کی معاونت حاصل ہوگی – یونیورسٹی کی طرف سے اتوار کو جاری پریس ریلیز کے مطابق اس منصوبہ کی ٹیم میں جامعہ خلیفہ کے وہ محققین شامل ہونگے جو کہ ان دنوں لندن کے امپیریل کالج کے محققین کے ساتھ مل کر کام کررہے ہیں – تعاون پر مبنی اس تحقیق کے معاہدے پر صندوق الوطن کے قائمقام ڈی جی احمد فکری اور جامعہ خلیفہ کے ایگزیکٹو وائس پریزیڈنٹ ڈاکٹر عارف سلطان الھمادی نے دستخط کیئے – اس محقق ٹیم نے پہلے ہی ایسے کانٹیکٹ لینز کا پروٹو ٹائپ تیار کررکھا ہے جسے ذاتی استعمال کے قابل بنانے کیلئے مزید بہتر شکل دی جائے گی جبکہ صںدوق الوطن کی جانب سے تحقیقی معاونت کی گرانٹ سے اس منصوبہ پر مزید تحقیق ہوگی اور اس پراڈکٹ کو کاروباری بنیاد پر تیار کیا جائے گا – اس لینز کی تیاری سے ان کلر بلائنڈ لوگوں کو گرانقدر فائدہ ملے گا جن کی بیماری کا فی الوقت کوئی علاج یا تدارک نہیں ہے ، ایسے لوگوں کیلئے موجودہ دستیاب عینک عموما بہت وزنی ہونے کے ساتھ نظر کی درستگی سے مماثلت بھی نہیں رکھتیں جبکہ پہلے سے موجود لینز نہ صرف بہت مہنگے ہیں بلکہ اس سے تمام ایسے افراد مستفید بھی نہیں ہوسکتے – الدار پراپرٹیز کے سی ای او طلال الذیابی کا کہنا ہے کہ تحقیق پر مبنی یہ اقدام نہ صرف لوگوں کی زندگی کو حقیقی معنوں میں بدل دے گا بلکہ اس سے طبی اور تحقیقی ترقی میں متحدہ عرب امارات کی حیثیت مزید مسلمہ و بلند ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ اماراتی محققین نے معاشرے کی بہتری کیلئے پہلے بھی بہت سے مثبت کام کیئے ہیں اور اب ان کانٹکیٹ لینز کی تیاری ملک کے صحت عامہ مقاصد کے حصول اور ابوظہبی کے ویژن 2030 میں اہمیت کی حامل ہوگی – صندوق الوطن کے قائمقام ڈی جی احمد فکری کا کہنا تھا کہ تحقیق کا یہ معاہدہ جدید سائنسی تحقیق کے لازمی عنصر جیسی اہمیت کا حامل ہے ، ایسے منصوبے حقیقی معنوں میں اماراتی معاشرے کے لئے بہت فائدہ مند ہیں جوکہ صحت عامہ شعبے میں ملک کو ایک اہم عالمی مقام بھی عطا کرنے میں معاون ہیں – جامعہ خلیفہ میں میکنیکل انجینئرنگ کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر حیدر بٹ اس منصوبہ کے پرنسپل انویسٹی گیٹر بنائے گئے ہیں ۔ اس منصوبہ کے تحت ایسے لینز بنائے جانے ہیں جوکہ مختلف آپٹیکل فلٹرنگ بینڈز کے حامل ہوں اور مختلف قسم کی کلر بلائنڈنس کو بھی کور کرتے ہیں ۔ ان لینز کی سٹارٹ اپ کمپنی کے قیام کی خاطر اس منصوبہ کے شراکت دار جامعہ خلیفہ کے دفتر برائے ٹیکنالوجی مینجمنٹ کی وساطت سے خلیفہ تخلیقی مرکز کے ساتھ مل کر کام بھی کریں گے – ترجمہ ۔ تنویر ملک – http://wam.ae/en/details/1395302901977

WAM/Urdu