جمعہ 30 ستمبر 2022 - 6:57:36 شام

سوڈان میں تباہ کن سیلاب:متعدد دیہات متاثر،لوگوں کے گھر تباہ ہوگئے

  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
  • سيول السودان .. قرى منكوبة و قلوب مكلومة و أسر بلا مأوى
ویڈیو تصویر

خرطوم، 19 ستمبر، 2022 (وام) ۔۔ سوڈان میں حالیہ دنوں میں آنے والے سیلاب سے درجنوں افراد ہلاک اور مکانات اور املاک تباہ ہوگئی ہیں جسے ایک دہائی میں آنے والابدترین سیلاب قرار دیا گیاہے۔

سیالب سے ہونے والے تباہی کے مناظر دارالحکومت خرطوم سے 300 کلومیٹر کے فاصلے پر شروع  ہو جاتے ہیں، جس نے ملک میں سب سے زیادہ خوراک پیدا کرنے والے علاقے الجزیرہ اسکیم کو متاثر کیا،سیلاب نے دارالسلام اور الجزیرہ ریاست میں الحولا اور الجدیدہ کے دیہاتوں کوبھی شدید متاثر کیا۔

الجزیرہ ریاست میں دارالسلام اور المناقل کے شہر طوفانی بارشوں اور سیلاب سے متاثرہ 14 دیگر ریاستوں میں شامل ہیں۔

امارات خبر ایجنسی (وام ) نے متاثرہ دیہات کے متعدد متاثرہ رہائشیوں کے تاثرات معلوم کیے ۔

ایک متاثرہ شخص عبدالعزیز آدم نے کہا کہ سیلاب ار بارشوں سے ہونے والی تباہی کے بعد حالات سنگین ہیں، بہت سے مکانات تباہ اور مویشی ہلاک ہوئے ہیں اور اسے نیا گھر بنانے کے لیے مدد کی ضرورت ہے۔

سیلاب سے اموات کے علاوہ صحت، ماحولیات اور غذائیت کے حوالے سے سنگین اثرات مرتب ہوں گےجس سے بیماریوں اور وبائی امراض کے پھیلنے کا خدشہ ہے۔

43 سالہ ہدیہ عثمان کا کہنا ہے کہ آدھی رات کے وقت اس کے گاؤں میں سیلابی پانی داخل ہوا جس سےاس کا گھر تباہ ہونے سے اس کا خاندان بے گھرہوگیا ہے۔

ست الجيل أحمد العوض نے وام کو بتایا کہ اس نے اپنے خاندان کو سیلاب سے بچانے کی کوشش کی تھی،،اس کا گھر مکمل طور پر تباہ ہو گیا ہے۔ اور اس وقت خوراک اور ادویات کی قلت کے علاوہ تباہی کی وجہ سے بیماریوں کے پھیلنے کا خدشہ ہے ۔

 دریائے نیل کی ریاست کے ڈپٹی گورنر صلاح الدین علی محمد نے وام کو بتایاکہ گزشتہ اگست میں خاص طور پر شمالی اور وسطی علاقوں میں موسلا دھار بارشوں کا ایک سلسلہ شروع ہوا جس سے شندي، بربر ،ابو حمد اورالحدث کے علاقے میں بہت سے دیات متاثر ہوئے۔

سوڈان کی سول ڈیفنس کونسل کے اعدادوشمار کے مطابق 5 ستمبر سے اب تک مجموعی طور پربارشوں اور سیلاب سے 112 ہلاکتیں ہوئیں جب کہ 115 زخمی ہوئے، 34,944 مکانات مکمل طور پر منہدم اور 49,096 جزوی طور پر منہدم ہوئے جبکہ 314 سہولیات اور 108 دکانیں تباہ ہو گئیں۔

اعدادوشمار میں مزید بتایا گیا کہ 124,000 ایکڑ سے زائد اراضی زیر آب آنے سے زرعی شعبے کو بھی کافی نقصان پہنچا۔

شمالی كردفان ریاست میں سب سے زیادہ 26 افراد کی اموات ہوئیں جبکہ جنوبی كردفان ریاست میں سب سے زیادہ 49 افراد زخمی ہوئے، الجزیرہ ریاست میں سب سے زیادہ 6,611 مکانات گرنے کے ساتھ ساتھ جزوی طور پر 9,978 مکانات کو نقصان پہنچا۔شمالی ریاست میں تباہ شدہ سہولیات کی سب سے زیادہ تعداد 90 ہے، شمالی اور جنوبی كردفان دونوں ریاستوں میں سب سے زیادہ 32 اسٹورز اور گوداموں کو نقصان پہنچا۔

ترجمہ۔ تنویر ملک

https://wam.ae/en/details/1395303085333

WAM/Urdu