تیسری سہ ماہی میں شارجہ میں املاک کے لین دین کی مالیت چار ارب بیس کروڑ درہم ریکارڈ


شارجہ ، 3 نومبر ، 2019 (وام) ۔۔ شارجہ رئیل اسٹیٹ رجسٹریشن ڈیپارٹمنٹ ، ایس آر ای آر ڈی کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق شارجہ میں 2019 کی تیسری سہ ماہی کے دوران املاک کے لین دین کی مالیت چار ارب بیس کروڑ درہم رہی جبکہ اس امارات میں پچانوے لاکھ فٹ رقبے کے سودے ہوئے۔ ایس آر ای آر ڈی کے ڈائریکٹر جنرل ، عبد العزیز احمد الشامسی نے بتایا کہ شارجہ میں جولائی ، اگست اور ستمبر کے مہینوں میں ستانوے ہزار چار سو چودہ غیر منقولہ جائیداد کا لین دین ریکارڈ کیاگیا اس کے مقابلے میں 2018 کے انہی تین ماہ میں انتالیس ہزار تین سو گیارہ املاک کالین دین ریکارڈ ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ 2018 کے اسی عرصے کے مقابلے میں 2019 کی تیسری سہ ماہی میں ریکارڈ شدہ لین دین میں 31.4 فیصد کا نمایاں اضافہ ہواہے۔ الشامسی نے کہا کہ شارجہ مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کے لئے ایک پرکشش مارکیٹ بن چکا ہے۔ "اس کی بنیادی وجہ سپریم کونسل کے رکن اور شارجہ کے حکمران عزت مآب ڈاکٹر شیخ سلطان بن محمد القاسمی کی ہدایات ہیں جو خود بھی جو رئیل اسٹیٹ سیکٹر پر بہت زیادہ توجہ دیتے ہیں۔"

انہوں نے کہاکہ "حوصلہ افزا کاروباری ماحول نے علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر امارت کے قابل اعتماد ، معاشی اور سرمایہ کار مرکز کی حیثیت کوفروغ دیا ہے۔"

الشامسی نے مزید کہا کہ شارجہ خطے کی فیملیز کے لئے ایک پسندیدہ سیاحتی مقام بن چکا ہے۔ "امارت فیملیز کی رہائش اور کام کرنے کے حوالے سے ایک بہترین منزل بن چکی ہے۔"

انہوں نے بتایا کہ شارجہ نے حال ہی میں دنیا بھر کے 200 سے زیادہ شہروں میں اول پوزیشن حاصل کرتے ہوئے اقوام متحدہ کا "چائلڈ فرینڈلی سٹیز ایوارڈ" حاصل کیا ہے۔اس نے عالمی ادارہ صحت کے عالمی نیٹ ورک آف ایج فرینڈلی سٹیز میں شمولیت اختیار کی ہے اور اس بین الاقوامی نیٹ ورک میں عرب دنیا سے پہلارکن بن گیا ہے۔ ریل اسٹیٹ کے بیشتر سودے شارجہ سٹی برانچ میں ریکارڈ کیے گئے ، جو سودوں کی کل مالیت کا 96.9 فیصد ہے۔ رہائشی املاک "سیلز" ٹرانزیکشن میں پہلے نمبر پر ہیں جو ریکارڈ شدہ کل لین دین کا 64.4 فیصد ہے۔ ان کے بعد صنعتی املاک (17.9 فیصد) ، تجارتی املاک (13.8 فیصد) ، اور زرعی املاک (3.9 فیصد) ہیں۔ دنیا بھر کے 41 ممالک کے سرمایہ کاروں نے 2019 کی تیسری سہ ماہی کے دوران شارجہ کے رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں سرمایہ کاری کی ۔ شارجہ میں "خلیج تعاون کونسل ممالک کے شہریوں کی غیر منقولہ جائداد میں سرمایہ کاری کی مالیت تین ارب پچاس کروڑ درہم رہی جبکہ دیگر ممالک کے شہریوں کی جانب سے غیر منقولہ جائداد میں سرمایہ کاری تقریباً ستر کروڑ ڈالر ریکارڈ کی گئی۔"

(تصویری کریڈٹ: شارجہ 24) ترجمہ۔تنویر ملک

http://wam.ae/en/details/1395302799542

WAM/Urdu