جمعرات 07 جولائی 2022 - 2:58:29 شام

تمام جانداروں کے لیے مشترکہ مستقبل کی تعمیرکی جائے: اقوام متحدہ سربراہ کاحیاتیاتی تنوع کے عالمی دن پر مطالبہ


نیویارک، 22 مئی، 2022 (وام) ۔۔ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتریس نے فطرت کے خلاف بے معنی اور تباہ کن جنگ‘ کو ختم کرنے پر زور دیتے ہوئے حیاتیاتی تنوع کے عالمی دن کے موقع پرکہا ہے کہ زمینی ماحول کا تین چوتھائی اور تقریباً 66 فیصد سمندری ماحول انسانی سرگرمیوں سے نمایاں طور پر تبدیل ہوگیا ہے۔ ہر سال 22 مئی کوحیاتیاتی تنوع کا عالمی دن اقوام متحدہ کی طرف سے حیاتیاتی تنوع کو درپیش مسائل کو اجاگر کرنے کے لئے منایا جاتا ہے۔ انتونیو گوتریس نے ایک بیان میں کہا کہ پائیدار ترقی کے اہداف کے حصول، موسمیاتی تبدیلی کے خطرے کو ختم کرنے، زمینی انحطاط کو روکنے، خوراک کے تحفظ اور انسانی صحت کو بہتر بنانے میں معاونت کے لیے حیاتیاتی تنوع ضروری ہے۔ اقوام متحدہ ک سربراہ نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ حیاتیاتی تنوع ماحول دوست اورجامع ترقی کا ذریعہ ہے اور رواں سال، 2030 تک کرہ ارض کو بحالی کے راستے پر ڈالنے کے لیے واضح اور قابل حصول اہداف کے ساتھ عالمی حیاتیاتی تنوع کے فریم ورک پراتفاق رائےکے لیے ممالک اکٹھا ہوں گے۔ انہوں نے بتایا کہ فریم ورک حیاتیاتی تنوع کو نقصان پہنچانے والے محرکات کو روکتے ہوئے زمین،میٹھے پانی اور سمندروں کی مؤثر طریقے سے حفاظت کے ساتھ پائیدار کھپت اور پیداوار کی حوصلہ افزائی کرے گا اورموسمیاتی تبدیلی کے مسائل کے حل اور ماحول کو نقصان پہنچانے والی نقصان دہ سبسڈیز کے خاتمے کے لئے فطرت پر مبنی طریقے وضع کرے گا۔ گوتریس نے مزید کہا کہ حیاتیاتی تنوع کے فوائد سےسب کے استفادہ کو یقینی بنانے کے لئے عالمی معاہدے کو ٹھوس نوعیت کی مثبت سرمایہ کاری کو آگے بڑھانے کے لیے کارروائی اور مالی وسائل کو بھی متحرک کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اہداف کو حاصل کرتے اور"فطرت کے ساتھ ہم آہنگی کے ساتھ رہنے" کے 2050 کے وژن پر عملدرآمد کرتے ہوئے ہمیں مساوات اور انسانی حقوق کااحترام کرنا چاہیے، خاص طور پر بہت سی مقامی آبادیوں کے حوالے سے جن کے علاقوں میں بہت زیادہ حیاتیاتی تنوع موجود ہے۔ اقوام متحدہ سربراہ نے کہا کہ ہمارے کرہ ارض کی ناگزیر اور نازک قدرتی دولت کو بچانے کے لیے ہر کسی کو کوشش کرنے کی ضرورت ہے، بشمول نوجوان اور معاشروں کے کمزور طبقات کو جن کی معاش کاانحصار فطرت پر سب سے زیادہ ہے۔ گوتریس نے کہا کہ آج، وہ دنیا کے تمام لوگوں سے اس چیز کا مطالبہ کرتے ہیں کہ ہر ایک زندگی کے لیے مشترکہ مستقبل کی تعمیر کے لیے کام کریں۔ اقوام متحدہ کی بحالی کے عشرے کی مناسبت سے، تمام زندگیوں کے لیے مشترکہ مستقبل کی تعمیر رواں سال کے بین الاقوامی دن کاخاص طور پر فوکس ہے۔ حیاتیاتی تنوع کے وسائل وہ ستون ہیں جن پر ہم تہذیبوں کی تعمیر کرتے ہیں۔ مچھلی تقریباً 3 ارب لوگوں کو 20 فیصد پروٹین جبکہ پودے انسانی خوراک کا 80 فیصد سے زیادہ فراہم کرتے ہیں۔ ترقی پذیر ممالک میں دیہی علاقوں میں رہنے والے تقریباً 80 فیصد لوگ بنیادی صحت کی دیکھ بھال کے لیے روایتی پودوں پر مبنی ادویات پر انحصار کرتے ہیں۔اس کے باوجود، تقریباً 10 لاکھ جانوروں اور پودوں کی انواع معدومیت کے خطرے سے دوچار ہیں۔ ترجمہ۔تنویر ملک http://wam.ae/en/details/1395303049917

WAM/Urdu