بدھ 01 فروری 2023 - 5:57:46 صبح

متحدہ عرب امارات کے وزراءاور سرکاری عہدیداروں نے ورلڈ اکنامک فورم کےاجلاسوں میں ملکی کامیابیوں اور امید افزا مواقع کا جائزہ پیش کیا

  • 52636326992_418e0b46ac_o
  • _dgx3448
  • _dgh3898.jpg
  • 52636782501_b304214083_o
  • dscf3793.jpg
  • 52636367847_f631efcedb_o
  • _mel9369.jpg

ڈیووس، 20 جنوری، 2023 (وام) ۔۔ کابینہ امور کے وزیر محمد بن عبداللہ القرقاوی کی سربراہی میں متحدہ عرب امارات کے وفد نے سوئٹزرلینڈکے شہر ڈیووس میں ہونے والے ورلڈ اکنامک فورم( ڈبلیو ای ایف) کے سالانہ اجلاس کے موقع پر ہونے کئی سیشنز، کانفرنسز اور دو طرفہ اجلاسوں میں شرکت کی،جن میں 130 ممالک کی 2700 سے زائد سرکاری شخصیات اور عہدیداروں شریک ہوئے۔

اماراتی وزراء اور عہدیداروں نے اس بین الاقوامی سالانہ پلیٹ فارم میں ڈیجیٹل تبدیلی، اے آئی، خلائی سرگرمیوں، ڈیجیٹل کرنسیزاور اقتصادی ترقی کے شعبوں میں متحدہ عرب امارات کی حالیہ کامیابیوں پر تبادلہ خیال کیا ۔

متحدہ عرب امارات وفد کے پبلک سیشنز

وزیر برائے کمیونٹی ڈویلپمنٹ حصہ بنت عيسى بوحميد نے "ان کیس آف فائر یوز سٹیئرز" کے عنوان سے ایک پبلک سیشن میں شرکت کی، جہاں انہوں نے ایسے اختراعی اور موثر حل تلاش کرنے کی اہمیت کو اجاگر کیا جو قدرتی بحرانوں اور آفات کے دوران پرعزم لوگوں کی ضروریات کو پورا کرتے ہیں۔ انہوں نے اپنے تزویراتی منصوبے اور قومی پالیسیوں کے ذریعے پرعزم لوگوں کو بااختیار بنانے کے حوالے سے کمیونٹی کی جامع ترقی میں متحدہ عرب امارات کی قابل ذکر کوششوں اور کامیابیوں کا جائزہ پیش کیا جن کا مقصد ہر پہلو سے پرعزم افرادکی حفاظت اور مدد کرنا ہے۔

وزیر اقتصادیات عبداللہ بن طوق المری نے "بیٹوین لیکویڈیٹی اینڈ فراجیلٹی: مینا کے خطے میں اصلاحات" کے عنوان سے ایک سیشن میں شرکت کی، ایجلٹی کویت کے چئیر آف ڈائریکٹرز هنادی الصالح، مصرکی وزیر منصوبہ بندی و اقتصادی ترقی هالہ السعيد، کریسنٹ پیٹرولیم، یو اے ای کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ماجد جعفر اور سعودی عرب کے وزیر اقتصادیات و منصوبہ بندی فیصل الابراهيم نے بھی سیشن میں شریک تھے۔

انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات دنیا کے ممالک میں اپنی سرکردہ پوزیشن کو مستحکم کرنے کی کوششوں کے تحت لچکدار اور مسابقتی اقتصادی نقطہ نظر اور پالیسیوں کے تحت اپنی پائیدار ترقی کی راہ پر گامزن ہے۔

وزیرمملکت برائے پبلک ایجوکیشن وایڈوانسڈ ٹیکنالوجی سارہ الأميری نے متنوع، علم پر مبنی معیشت کی طرف بڑھنے کے عزم کے تحت قومی خلائی شعبے کو ترقی دینے کے لیے متحدہ عرب امارات کے جاری منصوبے کا جائزہ پیش کیا۔ انہوں نے مختلف سائنسی شعبوں میں نوجوان صلاحیتوں کو بااختیار بنانے کے علاوہ خلائی شعبے کی ترقی میں شراکت کے لیے کمپنیوں کے لیے اختراعی اور معاون ماحول پیدا کرنے کی اہمیت کو اجاگر کیا۔

وزیرمملکت نےان خیالات کا اظہار"فائنل فرنٹیئر کے قریب" کے عنوان سے ہونے والے سیشن میں کیا، سیشن میں ڈائریکٹر جنرل یورپی خلائی ایجنسی پیرس، جوزف اسچباکر، انمارسیٹ گلوبل، برطانیہ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر راجیو سوری، میساچوسٹس، انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی(ایم آئی ٹی)۔میڈیا لیبارٹری امریکہ کے ڈائریکٹر ڈیوا نیومین اور وائجر اسپیس، ینگ گلوبل لیڈرامریکہ کے چیئرمین اور چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈیلن ای ٹیلر شریک ہوئے۔

ورلڈ اکنامک فورم کے سالانہ اجلاسوں میں شرکت کے دوران وزیر مملکت برائے خارجہ تجارت ڈاکٹر ثانی بن احمد الزیودی نے عالمی معیشت کی ترقی کو تیز کرنے کے ایک اہم محور کے طور پر تجارت کی اہمیت پر زور اور موجودہ چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے سپلائی چین کو جدید بنانے کی ضرورت پر زور دیا ۔

وزیر مملکت برائے حکومتی ترقی و مستقبل عهود بنت خلفان الرومی، سارة بنت يوسف الأميری اور وزیر مملکت برائے مصنوعی ذہانت، ڈیجیٹل اکانومی و ریموٹ ورک ایپلی کیشنز عمر بن سلطان العلمانے"فیوچر بائی ڈیزائن" کے عنوان سے ہونے والے ایک سیشن میں شرکت کی۔سیشن کے دوران وزراء نے مختلف شعبوں میں پائیدار ترقی کو فروغ دینے، نسلوں کے بہتر مستقبل کو یقینی بنانے کے لیے امید افزا مواقع اور چیلنجز کے لیے تیاری کرنے میں متحدہ عرب امارات کے اہم تجربات کا جائزہ پیش کیا۔

العلماء نے ورلڈ اکنامک فورم کے دوران "فائنڈنگ دی رائٹ بیلنس فارکرپٹو " کے عنوان سے ہونے والے سیشن میں بھی شرکت کی۔ انہوں نے یورپی کمیشن کے کمشنر برائے مالیاتی خدمات، مالیاتی استحکام و کیپٹل مارکیٹس یونینمیریڈ میک گوئنیس ، نیدرلینڈز کے مرکزی بینک کے صدر کلاس ناٹ،رپل امریکہ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر براڈ گارلنگ ہاؤس سے کرپٹو مارکیٹوں میں ڈرامائی اتار چڑھاؤ اور مستقبل کی معیشتوں میں ڈیجیٹل کرنسیوں کے کردار اور فوائد پر تبادلہ خیال کیا۔

"ان لاکنگ ڈیجیٹل آئی ڈی" کے عنوان سے ہونے والے پبلک سیشن کے دوران، دبئی فیوچر فاؤنڈیشن کے سی ای او خلفان بلهول نے مختلف قسم کے امید افزا مواقع پیش کرنے میں تیز رفتار ڈیجیٹل تبدیلیوں کے کردار پر تبادلہ خیال کیا جن کو مختلف معاشی، سرکاری اور سماجی سطح پر عالمی خواہشات کے حصول کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ بلهول نے مشترکہ تعاون کو بڑھانے اور متحد کوششوں اور مستقبل کے تصورات کی ضرورت پر زور دیا۔

اس کے علاوہ، ورلڈ اکنامک فورم (ڈیووس 2023)نے سٹیئرنگ کمیٹی برائے میٹاورس گورننس کے لیے خلفان بلهول کو رکن منتخب کرنے کا اعلان کیاجس میں بین الاقوامی ماہرین شامل ہیں۔ کمیٹی فورم کے اقدام "گلوبل کولیبوریٹو ویلیج" کے اہداف کے حصول کی نگرانی کرتی ہے جس کا مقصد میٹاورس مواقع کی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے کے لیے عالمی کوششوں کو تقویت دینا، اور سرکاری اور نجی شعبوں کے درمیان موثر شراکت داری کو فعال کرنا ہے۔

پویلینز یوتھ سرکلز

اپنی سرگرمیوں تحت، یو اے ای پویلین نے "نیٹ زیرو مقاصد کو تیز کرنے میں نوجوانوں کا کردار" کے بارے میں یوتھ سرکل کا انعقاد کیا۔ وزیر مملکت برائے امورِ نوجوانان شما بنت سہیل فارس المزروعی، کاپ28 کے ایگزیکٹو آفس کے ڈائریکٹر جنرل ماجد السویدی اور موسمیاتی تبدیلی پر اقوام متحدہ فریم ورک کنونشن (یو این ایف سی سی سی) کے ایگزیکٹو سیکرٹری گریناڈا کے سمون اسٹیل، نے سیشن میں شرکت کی۔ انہوں نے نوجوانوں کے کردار کو فعال کرنے،کلائمیٹ ایکشن کی کوششوں میں ان کے کردار کو بڑھانے کے لیے مناسب طریقہ کارکی فراہمی سمیت متعدد موضوعات پر تبادلہ خیال کیا ۔

اس کے علاوہ، یواے ای پویلین میں "ڈیجیٹل ورلڈ میں سافٹ پاور" پر تبادلہ خیال کے لیے فائر سائیڈ چیٹ کا انعقاد کیاگیا، جس کے دوران برانڈ فنانس کے چیئرمین اور سی ای او ڈیوڈ ہیگ ، ناس اکیڈمی اور ناس ڈیلی کے بانی اور چیف ایکزیگٹو نصیر یاسین نے ڈیجیٹل دنیا کی بڑھتی ہوئی اہمیت پر روشنی ڈالی اور بتایا کہ یہ مختلف شعبوں میں ترقی کی کامیابیوں پر کیسے اثرانداز ہوتی ہے۔

ترجمہ۔تنویرملک

http://wam.ae/en/details/1395303121094

Farrukh Tanveer Malik